60

دھاندلی کے خلاف تحقیقاتی کمیشن بننے تک کوئی کام نہیں کرنے دیں گے: شہباز شریف

لاہور: سابق وزیر اعلیٰ پنجاب اور مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کا کہنا ہے کہ الیکشن میں دھاندلی کی تحقیقات کے لیے کمیشن بنایا جائے، کمیشن کے قیام تک ہم کسی کارروائی کو آگے نہیں بڑھنے دیں گے۔

تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کا کہنا ہے کہ الیکشن میں دھاندلی کی تحقیقات کے لیے کمیشن بنایا جائے، کمیشن تحقیقات کے بعد عوام کو حقائق سے آگاہ کرے۔ ’کمیشن کے قیام تک ہم کسی کارروائی کو آگے نہیں بڑھنے دیں گے‘۔

انہوں نے کہا کہ امید ہے کہ خان صاحب اپنا وعدہ پورا کریں گے، انہوں نے کہا تھا کہ ہم پارلیمانی کمیشن بنانے کے لیے تیار ہیں۔ کمیشن کو مکمل اختیار دیا جائے دھاندلی کو بے نقاب کرے۔ انتخابات میں دھاندلی کی فرانزک رپورٹ آنی چاہیئے۔

شہباز شریف نے کہا کہ عمران خان کی حکومت کے 3 ہفتے گزر گئے مگر لائحہ عمل نہیں آیا، جب تک کمیشن وجود میں نہیں آئے گا ہم کام نہیں کرنے دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے 3 روپے فی یونٹ بجلی کی قیمت کم کی تھی، حکومت نے 5 روپے فی یونٹ بجلی کی قیمت میں اضافہ کیا۔ حکومت نے گیس کی قیمت میں بھی 40 فیصد اضافہ کردیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی قیادت میں 5 ہزار میگا واٹ بجلی کے منصوبے لگائے، امید کرتا ہوں ماضی کی طرح یو ٹرن میں اضافہ نہیں ہوگا۔ سی پیک پاکستان کے لیے انمول تحفہ ہے، چینی کمپنی نے اربوں روپے کی سرمایہ کاری کی ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ حکومت نے ٹیوب ویلز کے لیے سبسڈی ختم کردی، کھادکی قیمت بڑھادی۔ ’ہم نے کھاد کی قیمتیں کم کرنے کے لیے اربوں کی سبسڈی دی‘۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نے کل ڈیمز کی بات کی، اچھی بات ہے ڈیم بننے چاہئیں، ن لیگ نے بھاشا ڈیم کے لیے 122 ارب روپے خرچ کیے۔ بھاشا ڈیم کے پاور جنریشن کے لیے فنڈز اکٹھے کرنے کی ضرورت نہیں، وزیر اعظم بجلی بنانے کے لیے سرمایہ کاروں کو مدعو کریں۔

شہباز شریف نے مزید کہا کہ بجلی کی لوڈ شیڈنگ آسمانوں سے باتیں کر رہی ہے، شہروں میں 10، 12 اور دیہاتوں میں16، 18 گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہے۔ ہم نے ملک بھر میں لوڈ شیڈنگ ختم کر کے دکھا دی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں